Bhadak Sakti Hai Zaalim Aag

نظم
بھڑک سکتی ہے ظالم آگ ، پانی میں نہیں رہنا
 تم اپنی شاعرانہ خوش بیانی میں نہیں رہنا
 
 نظر رکھنا کہ اس کے اور کیا کیا اب ارادے ہیں
 فقط تم یار جانی ، یار جانی میں نہیں رہنا
 
وہ زندہ آدمی کو بت بنا سکتا ہے سمجھے تم
اسیر اس شوخ کی جادو بیانی میں نہیں رہنا
 
جہاں تک ساتھ دیں وہیں تک لطفِ نغمہ ہے
 تر و تازہ یہ لہجہ دور ثانی میں نہیں رہنا
 
 ہمارے بعض شاعرائے مکرم کا مقولہ ہے
ضعیفی میں جوان رہنا ،جوانی میں نہیں رہنا
 
 تم اپنا خود کوئی کردار ساؔجد منتخب کر  لو
 گدا گر بن کے شاہوں کی کہانی میں  نہیں رہنا
Nazam
Bhadak Sakti Hai Zaalim Aag, pani main nahi rehna
Tum apni shayrana khush bayani main mat rehna
 
Nazar rakhna ke us ky aur kiya kiya ab iradhy hain
Faqat tum yaar jani, yaar jani mian nahi rehna
 
Wo zinda hai aadmi ko bot bana sakta hai samjhy tum
Asier us shokh ki jado bayni main nahi rehna
 
Jahan tak saath dain wahion tak lotaf nagma hai
Taro-taza yeh lahja dowr sani main nahi rehna
 
Hamary baaz shoraye mukarm ka maqola hai
Zaeefi ma jawan rehna, jawani main nahi rehna
 
Tum apna khud koi kirdar sajid muntakhib kr lo
Gada-gr ban ky shahon ki kahani main nahi rehna

اپنا تبصرہ بھیجیں