Sheher-E-Gul Ke Khas-O-Khashaak Se Khoof

Sheher-E-Gul Ke Khas-O-Khashaak Se Khoof

Sheher-E-Gul Ke Khas-O-Khashaak Se Khoof Aata Hai
Jis ka waris hoon usi se khak se khoof aata hai

Shakal banne nahi pati keh bigar jati hai
Nai mitti ko abhi chaak se khoof aata hai

Waqt ne aise ghomaye ufaq afaaq keh bas
Mehwar-e-gardish-e-safak se khoof aata hai

Yahi lehja tha keh mayaar sukhan tehra tha
Ab usi lehje-e-be baak se khoof aata hai

Aag jab aag se milti hai tou lo deti hai
Khaak ko khaak ke pushaak se khoof aata hain

Qamat-e-jaan ko khush aya tha kabhi khilat-e-ishq
Ab esi jamaa sada-e-chaak se khoof aata hai

Kabhi aflaak se nalon ke jawab aatay thay
En dinon alam-e-aflak se khoof aata hai

Rehmaat-e-sayyad-e-lolaak pe kamil imaan
Ummat-e-sayyad-e-lolaak se khoof aata hai

Sheher-e-gul ke khas-o-khashaak se khoof aata hai
Jis ka waris hoon usi se khak se khoof aata hai
غزل
شہرِ گل کے خس و خاشاک سے خوف آتا ہے
جس کا وارث ہوں اُسی خاک سے خوف آتا ہے

شکل بننے نہیں پاتی کہ بگڑ جاتی ہے
نئی مٹی کو ابھی چاک سے خوف آتا ہے

وقت نے ایسے گھمائے افق آفاق کہ بس
محورِ گردشِ سفّاک سے خوف آتا ہے

یہی لہجہ تھا کہ معیار سخن ٹھہرا تھا
اب اسی لہجۂ بے باک سے خوف آتا ہے

آگ جب آگ سے ملتی ہے تو لو دیتی ہے
خاک کو خاک کی پوشاک سے خوف آتا ہے

قامتِ جاں کو خوش آیا تھا کبھی خلعتِ عشق
اب اسی جامۂ صد چاک سے خوف آتا ہے

کبھی افلاک سے نالوں کے جواب آتے تھے
ان دنوں عالمِ افلاک سے خوف آتا ہے

رحمتِ سیدِؐ لولاک پہ کامل ایمان
امتِ سیدِؐ لولاک سے خوف آتا ہے

شہرِ گل کے خس و خاشاک سے خوف آتا ہے
جس کا وارث ہوں اُسی خاک سے خوف آتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں