Agle Din Kuchh Aise Honge

اگلے دن کچھ ایسے ہوں گے
چھلکے پھلوں سے مہنگے ہوں گے
ننھی ننھی چیونٹیوں کے بھی
ہاتھی جیسے سائے ہوں گے
بھیڑ تو ہوگی لیکن پھر بھی
سونے سونے رستے ہوں گے
پھول کھلیں گے تنہا تنہا
جھرمٹ جھرمٹ کانٹے ہوں گے
لوگ اسے بھگوان کہیں گے
جس کی جیب میں پیسے ہوں گے
ریت جلے گی دھوپ میں انورؔ
برف پہ بادل چھائے ہوں گے
agle din kuchh aise honge
chhilke phalon se mahnge honge

nannhi nannhi chiyuntiyon ke bhi
hathi jaise sae honge

bhid to hogi lekin phir bhi
sune sune raste honge

phul khulenge tanha tanha
jhurmut jhurmut kante honge

log use bhagwan kahenge
jis ki jeb mein paise honge

rit jalegi dhup mein ‘anwar’
barf pe baadal chhae honge

اپنا تبصرہ بھیجیں