Ajeeb Hadsa Hua Ajeeb Saneha Hua

غزل
عجیب حادثہ ہوا عجیب سانحہ ہوا
میں زندگی کی شاخ سے ہرا بھرا جدا ہوا

ہوا چلی تو اُس کی شال میری چھت پے آ گری
یہ اُس بدن کے ساتھ میرا پہلا رابطہ ہوا

زیادہ کچھ نہیں ہمت تو کر ہی سکتے ہیں
اک اچھے کام کی نیت تو کر ہی سکتے ہیں

خدا کے ہاتھ سے لکھا مقدر اپنی جگہ
ہم اُس کے بندے ہیں محنت تو کر ہی سکتے ہیں

ہزاروں سال گزارے ہیں مقتدی رہے کر
اک آدھ بار امامت تو کر ہی سکتے ہیں

ہمارے بچے اجازت طلب نہیں کرتے
مگر بتانے کی زحمت تو کر ہی سکتے ہیں

غریب لوگ مرمت نہ کر سکیں تو کیا
شکستہ گھر کی حفاظت تو کر ہی سکتے ہی
Ghazal
Ajeeb Hadsa Hua Ajeeb Saneha Hua
Main zindagi ki shaakh sy hara bhara juda hua

Hawa chali tu us ki shaal meri chaht pay aa giri
Yeh us badan ke sath mera pehla rabta hua

Zeyda kuch nahi himmat to kr hi sakty hain
Ek achay kaam ki neyat tu kr hi sakty hain

Khuda ke hath sy likha muqaddar apni jagah
Hum uske bande hain mehnat tu kr hi sakty hain

Hazaron saal guzare hain muqtadi reh kr
Ek adh bar imamat tu kr hi sakty hain

Hamare bachay ijazat talab nahi krtay
Magar btanay ki zehmat tu kr hi sakty hain

Gareeb log morammat na kr sake to kiya
Shekasta ghar ki hifazat tu kr hi sakty hain

اپنا تبصرہ بھیجیں