Tar-E-Shabnam Ki Tarah Surat-E-Khas Tut-Ti Hai

Tar-E-Shabnam Ki Tarah Surat-E-Khas Tut-Ti Hai

Tar-E-Shabnam Ki Tarah Surat-E-Khas Tut-Ti Hai
Aas bandhane nahi pati hai keh bas tut-ti hai

Aarzuon ka hojum aur ye dhalti hoi umr
Sans ukharti hai na zanjir-e-hwas tut-ti hai

Gard itni ke sujhai nahi deta kuch bhi
Shor itna hai ke aawaz-e-jaras tut-ti hai

Munhadam hota chala jata hai dil saal ba saal
Aisa lagta hai girah ab ke baras tut-ti hai

Bo-e-gul aye na aye magar ishaaq ke bech
Itni wehshat hai ke diwar-e-qafas tut-ti hai

Zikr asma-e-ilahi ka hai faizan ke ab
Dam ulajhta hai na tasbih-e-nafas tut-ti hai

Tar-e-shabnam ki tarah surat-e-khas tut-ti hai
Aas bandhane nahi pati hai keh bas tut-ti hai
غزل
تار شبنم کی طرح صورت خس ٹوٹتی ہے
آس بندھنے نہیں پاتی ہے کہ بس ٹوٹتی ہے

آرزووں کا ہجوم اور یہ ڈھلتی ہوئی عمر
سانس اکھڑتی ہے نہ زنجیر ہوس ٹوٹتی ہے

گرد اتنی کہ سجھائی نہیں دیتا کچھ بھی
شور اتنا ہے کہ آواز جرس ٹوٹتی ہے

منہدم ہوتا چلا جاتا ہے دل سال بہ سال
ایسا لگتا ہے گرہ اب کے برس ٹوٹتی ہے

بوئے گل آئے نہ آئے مگر عشاق کے بیچ
اتنی وحشت ہے کہ دیوار قفس ٹوٹتی ہے

ذکر اسمائے الٰہی کا ہے فیضان کہ اب
دم الجھتا ہے نہ تسبیح نفس ٹوٹتی ہے

تار شبنم کی طرح صورت خس ٹوٹتی ہے
آس بندھنے نہیں پاتی ہے کہ بس ٹوٹتی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں