Apni Safai Main Koi Hm Ny Biyaan Nahi Diya

غزل
اپنی صفائی میں کوئی ہم نے بیاں نہیں دیا
جل جل کے راکھ ہو گئے پھر بھی دھواں نہیں دیا
کتنی تھی سنگ دل ہوا ، جس نے ہم اہل شوق کے
سارے دیے بجھا دیئے ازنِ فغاں نہیں دیا
ایسا نہیں ملا کوئی جس سے بیان حال ہو
ورنہ تو اشتہار دل ہم نے کہاں نہیں دیا
پنجرے کی جالیوں سے کچھ پھول دکھائی دے سکیں
اب کے بہار نے ہمیں ایسا سماں نہیں دیا
کیسے ہیں بد نصیب لوگ ، جن کو خدا نے دہر نہیں دیا
نطق تو کر دیا عطا ، حسن بیاں نہیں دیا
تخت پے بیٹھ کر بھی وہ رب سے گلہ گزار ہیں
رنج یہ ہے کہ کیوں انہیں تخت رواں نہیں دیا
Ghazal
Apni Safai Main Koi Hm Ny Biyaan Nahi Diya
Jal jal ke rakh ho gay phir bhi dhowan nahi diya
Kitne the sang dill ,hawa jis ny ham ailh shook ke
Saary diyaa bojha diya azn faghaa nahi diya
Pinjary ki jaliyion sy koch phool dakhi dy sakay
Ab ke bahar ny hamay asia samaa nahi diya
Kisay hain bad log , jin ko khuda ny dhora nahi diya
Natk tu kr diya atta , hussan biyaan nahi diya
Takht pay baith kar bhi wo rab se gila guzar hain
Ranj yeh hai keh kyu inhain takht rawan nahi diya

اپنا تبصرہ بھیجیں