Harf Taza Nai Khushbu Mein Likha Chahta Hai

Harf Taza Nai Khushbu Mein Likha Chahta Hai

Harf Taza Nai Khushbu Mein Likha Chahta Hai
Baab ik aur mohabbat ka khula chahta hai

Aik lamhe ki tawajjo nahi hasil uss ki
Aur yeh dil keh usay had se siwa chahta hai

Ek hijab teh iqrar hai mayaa warna
Gul ko maloom hai kia dast saba chahta hai

Rait hi rait hai iss dil mein musafir mere
Aur yeh sahra utra naqash kaf pa chahta hai

Yahi khamoshi kai rang mein zahir hogi
Aur kuchh roz keh woh shookh khula chahta hai

Raat ko man liya dil ne muqaddar lekin
Raat ke hath peh ab koi diya chahta hai

Tere paimane mein gardish nahi baqi saqi
Aur teri bazam se ab koi utha chahta hai

Harf taza nai khushbu mein likha chahta hai
Baab ik aur mohabbat ka khula chahta hai
غزل
حرف تازہ نئی خوشبو میں لکھا چاہتا ہے
باب اک اور محبت کا کھلا چاہتا ہے

ایک لمحے کی توجہ نہیں حاصل اُس کی
اور یہ دل کہ اُسے حد سے سوا چاہتا ہے

اک حجاب تہہ اقرار ہے مائع ورنہ
گل کو معلوم ہے کیا دست صبا چاہتا ہے

ریت ہی ریت ہے اِس دل میں مسافر میرے
اور یہ صحرا ترا نقش کف پا چاہتا ہے

یہی خاموشی کئی رنگ میں ظاہر ہوگی
اور کچھ روز کہ وہ شوخ کھلا چاہتا ہے

رات کو مان لیا دل نے مقدر لیکن
رات کے ہاتھ پہ اب کوئی دیا چاہتا ہے

تیرے پیمانے میں گردش نہیں باقی ساقی
اور تری بزم سے اب کوئی اُٹھا چاہتا ہے

حرف تازہ نئی خوشبو میں لکھا چاہتا ہے
باب اک اور محبت کا کھلا چاہتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں