So Ab Ye Shart-E-Hayat Thahri

نظم
سو اب یہ شرط حیات ٹھہری
کہ شہر کے سب نجیب افراد
اپنے اپنے لہو کی حرمت سے منحرف ہو کے جینا سیکھیں

 

وہ سب عقیدے کہ ان گھرانوں میں
ان کی آنکھوں کے رنگتوں کی طرح تسلسل سے چل رہے تھے
سنا ہے باطل قرار پائے

 

وہ سب وفاداریاں کہ جن پر لہو کے وعدے حلف ہوئے تھے
وہ آج سے مصلحت کی گھڑیاں شمار ہوں گی

 

بدن کی وابستگی کا کیا ذکر
روح کے عہد نامے تک فسخ مانے جائیں

 

خموشی و مصلحت پسندی میں خیریت ہے
مگر مرے شہر منحرف میں
ابھی کچھ ایسے غیور و صادق بقید جاں ہیں
کہ حرف انکار جن کی قسمت نہیں بنا ہے
سو حاکم شہر جب بھی اپنے غلام زادے
انہیں گرفتار کرنے بھیجے
تو ساتھ میں ایک ایک کا شجرۂ نسب بھی روانہ کرنا

 

اور ان کے ہم راہ سرد پتھر میں چننے دینا
کہ آج سے جب
ہزارہا سال بعد ہم بھی
کسی زمانے کے ٹیکسلایا ھڑپہ بن کر تلاشے جائیں
تو اس زمانے کے لوگ
ہم کو
کہیں بہت کم نسب نہ جانیں

 

Nazam

So ab ye shart-e-hayat Thahri
Ki shahar ke sab najib afrad
Apne apne lahu ki hurmat se munharif ho ke jina sikhen

 

Wo sab aqide ki in gharanon mein
Un ki aankhon ke rangton ki tarah tasalsul se chal rahe the
Suna hai baatil qarar pae

 

Wo sab wafadariyan ki jin par lahu ke wade halaf hue the
Wo aaj se maslahat ki ghadiyan shumar hongi

 

Badan ki wabastagi ka kya zikr
Ruh ke ahd-name tak faskh mane jaen

 

Khamoshi-o-maslahat-pasandi mein khairiyat hai
Magar mere shahr-e-munharif mein
Abhi kuchh aise ghayyur-o-sadiq ba-qaid-e-jaan hain
Ki harf-e-inkar jin ki qismat nahin bana hai
So hakim-e-shahr jab bhi apne ghulam-zade
Unhen giraftar karne bheje
To sath mein ek ek ka shajra-e-nasb bhi rawana karna

 

Aur un ke hamrah sard patthar mein chunne dena
Ki aaj se jab
Hazar-ha sal baad hum bhi
Kisi zamane ke Tekslaya hadappa ban kar talashe jaen
To us zamane ke log
Hum ko
Kahin bahut kam-nasab na jaanen

اپنا تبصرہ بھیجیں