Mar Bhi Jaon To Kahan Log Bhula Hi Den Gay

غزل
مر بھی جاؤں تو کہاں لوگ بھلا ہی دیں گئے
لفظ میرے مرے ہونے کی گواہی دیں گئے

لوگ ٹھرا گئے جس وقت منادی آئی
آج پیغام نیا ظل الہی دیں گئے

جھونکے کچھ ایسے تپھکتے ہیں گلوں کے رخسار
جیسے اس بارتو پت جھڑ سے بچا ہی دیں گئے

ہم وہ شب زاد کہ سورج کی عنایات میں بھی
اپنے بچوں کو فقط کور نگاہی دیں گئے

آستیں سانپوں کی پہنیں گئے گلے میں مالا
اہل کوفہ کو نئی شہر پناہی دیں گئے

شہر کی چابیاں اعدا کے حوالے کر کے
تحفتََا اُنہیں مقتول سپاہی دیں گئے

Ghazal
Mar Bhi Jaon To Kahan Log Bhula Hi Den Gay
Lafz Mere, Mere Hone Ki Gawahi Den Gay

Log Thara Gaye Jis Waqt Manadi Aai
Aaj Paigham Nia Zil-E-Ilahi Den Gay

Jhonke Kuch Aise Thapakte Hain Gulon K Rukhsar
Jaise Is Bar To Patt Jhar Se Bacha Hi Den Gay

Hum Wo Shab Zad Keh Soraj Ki Anayaat Mein Bhi
Apne Bachon Ko Faqt Kowar Niga Hi Den Gay

Aasteen Sanpon Ki Pehnein Gay Gale Mein Maala
Ehl-E-Koofa Ko Nai Shehr Pana Hi Den Gay

Shehr Ki Chabian Aada Ky Hawale Kar Ky
Tuhftan Unhein Maqtool Sipahi Den Gay

اپنا تبصرہ بھیجیں