Tamaam Shehar Main Mshahor Hai Chalan Us Ka

غزل
تمام شہر میں مشہور ہے چلن اُس کا
اور اُس پے دیکھنے والا ہے بھول پن اُس کا

میں آئے روز اُسے تار تار کرتا ہوں
مگر نہیں کوئی ایک پہرہن اُس کا

ہم اُس کے باغ میں بیٹھے تھے اُس کے ساتھ
ہمارے دشت میں پھرتا رہا ہرن اُس کا

میں اور تھوڑا سا روتا تو اُس کے لوگوں نے
بنا دیا تھا میرے جسم کو کفن اُس کا

ہمارے جھرنے کہاں تک سہال سکتا تھا
نمک کی کان سے نکلا ہوا بدن اُس کا

خدا کے نام پے لوٹا تھا اُس نے لوگوں کو
خدا بھی سامنے لایا نہیں غبن اٗس کا

میں آئے روز اُسے تار تار کرتا ہوں
مگر نہیں ہے کوئی پرہن اُس کا
Ghazal
Tamaam Shehar Main Mshahor Hai Chalan Us Ka
Aur us py dikhny wala hai bhola-pan us ka

Main aaye roz usay tar,tar kerta hun
Magr nahi koi aik pehran uska

Hum us kay bagh main bethay thay us ky sath
Humary dusht main phirta raha haran uska

Main aur thora sa rota to us ky logo ny
Bana diya tha mery jism ko kafan us ka

Humary jehrany kahan tak sahaal sakta tha
Nemak ki kaan sy nikla howa badan us ka

Khuda ky naam pay lota tha us ny logo ko
Khuda bhi samny laya nahi gaban us ka

Main aaye roz usay tar tar kerta hun
Magar nahi hai koi pehran us ka

اپنا تبصرہ بھیجیں