Mere Aaba-O-Ajdad Nay Hurmat Aadmi Ka Liye

Mere Aaba-O-Ajdad Nay Hurmat Aadmi Ka Liye

Mere Aaba-O-Ajdad Nay Hurmat Aadmi Ka Liye
Ta abad rushni kay liye
Kalma-e-haq kaha
Maqtalon qaid khanon salibon mein behta

 Laho en kay hone ka elan karta raha
Wo laho hurmat aadhmi ki zamanat bana
Ta abad rushni ki alamat bana
Aur mein pa barhana sar kocha-e-ehtiyaz
rizq ki maslahat ka aasir aadmi

Suchta reh gaya
Jism mein mere un ka laho hai
 Tu phir yeh laho bolta kyun nahi
Mere Aaba-O-Ajdad Nay Hurmat Aadmi Ka Liye
نظم
میرے آبا و اجداد نے حرمت آدمی کے لیے
تا ابد روشنی کے لیے
کلمہ حق کہا
مقتلوں قید خانوں صلیبوں میں بہتا 

لہو ان کے ہونے کا اعلان کرتا رہا
وہ لہوحرمت آدمی کی ضمانت بنا
تا ابد روشنی کی علامت بنا
اور میں پا برہنہ سر کوچہ احتیاض
رزق کی مصلحت کا اسیر آدمی

سوچتا رہ گیا
جسم میں میرے ان کا لہو ہے
 تو پھر یہ لہو بولتا کیوں نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں