Doraha

شاعر:جاوید‌اختر
یہ جیون اک راہ نہیں

اک دوراہا ہے

پہلا رستہ 

بہت سہل ہے 

اس میں کوئی موڑ نہیں ہے 

یہ رستہ 

اس دنیا سے بے جوڑ نہیں ہے 

اس رستے پر ملتے ہیں 

ریتوں کے آنگن 

اس رستے پر ملتے ہیں 

رشتوں کے بندھن 

اس رستے پر چلنے والے 

کہنے کو سب سکھ پاتے ہیں 

لیکن 

ٹکڑے ٹکڑے ہو کر 

سب رشتوں میں بٹ جاتے ہیں 

اپنے پلے کچھ نہیں بچتا 

بچتی ہے 

بے نام سی الجھن 

بچتا ہے 

سانسوں کا ایندھن 

جس میں ان کی اپنی ہر پہچان 

اور ان کے سارے سپنے 

جل بجھتے ہیں

اس رستے پر چلنے والے 

خود کو کھو کر جگ پاتے ہیں 

اوپر اوپر تو جیتے ہیں 

اندر اندر مر جاتے ہیں 

دوسرا رستہ 

بہت کٹھن ہے 

اس رستے میں 

کوئی کسی کے ساتھ نہیں ہے 

کوئی سہارا دینے والا نہیں ہے 

اس رستے میں 

دھوپ ہے 

کوئی چھاؤں نہیں ہے 

جہاں تسلی بھیک میں دے دے کوئی کسی کو 

اس رستے میں 

ایسا کوئی گاؤں نہیں ہے 

یہ ان لوگوں کا رستا ہے 

جو خود اپنے تک جاتے ہیں 

اپنے آپ کو جو پاتے ہیں 

تم اس رستے پر ہی چلنا 

مجھے پتا ہے

یہ رستہ آسان نہیں ہے 

لیکن مجھ کو یہ غم بھی ہے 

تم کو اب تک 

کیوں اپنی پہچان نہیں ہے

Ye Jiwan Ek Raha Nahin

Ek Doraha Hai

pahla rasta 

bahut sahal hai 

is mein koi mod nahin hai 

ye rasta 

is duniya se bejod nahin hai 

is raste par milte hain 

reton ke aangan 

is raste par milte hain 

rishton ke bandhan 

is raste par chalne wale 

kahne ko sab sukh pate hain 

lekin 

tukde tukde ho kar 

sab rishton mein bat jate hain 

apne palle kuchh nahin bachta 

bachti hai 

be-nam si uljhan 

bachta hai 

sanson ka indhan 

jis mein un ki apni har pahchan 

aur un ke sare sapne 

jal bujhte hain

is raste par chalne wale 

khud ko kho kar jag pate hain 

upar upar to jite hain 

andar andar mar jate hain 

dusra rasta 

bahut kaThin hai 

is raste mein 

koi kisi ke sath nahin hai 

koi sahaara dene wala nahin hai 

is raste mein 

dhup hai 

koi chhanw nahin hai 

jahan tasalli bhik mein de de koi kisi ko 

is raste mein 

aisa koi ganw nahin hai 

ye un logon ka rasta hai 

jo khud apne tak jate hain 

apne aap ko jo pate hain 

tum is raste par hi chalna 

mujhe pata hai

ye rasta aasan nahin hai 

lekin mujh ko ye gham bhi hai 

tum ko ab tak 

kyun apni pahchan nahin hai

اپنا تبصرہ بھیجیں