Manzil Zikar Mein Har Sheher Pe Chhaye Howay Sheher

Manzil Zikar Mein Har Sheher Pe Chhaye

Manzil Zikar Mein Har Sheher Pe Chhaye Howay Sheher
Kya sana ho teri quraan main aye hoye sheher

Mere aqawoon ke maskan, mere Allah ka ghar
Mere nabiyon ki duaon main basaye hoye sheher

Zamzam-o-kusar-o-tasneem tasalsul tera
Chashma-e-khair ka faizan uthaye hoye sheher

Rukh-e-sarkaar-e-do alam ke palatne ki thi dair
Qibla ro ho gaye sab rah pe aye hoye sheher

Ek bosse ki ijazat hijar-e-aswad per
Aye mere noor ki barish mein nahay hoye sheher

Manzil zikar main har sheher pe chhaye hoye sheher
Kya sana ho teri quraan main aye hoye sheher
غزل
منزلِ ذکر میں ہر شہر پہ چھائے ہوئے شہر
کیا ثنا ہو تری قرآن میں آئے ہوئے شہر

میرے آقاؤں کے مسکن، مرے اللہ کے گھر
میرے نبیوں کی دُعاؤں میں بسائے ہوئے شہر

زمزم و کوثر و تسنیم، تسلسل تیرا
چشمہِ خیر کا فیضان اُٹھائے ہوئے شہر

رُخِ سرکارِ دو عالم کے پلٹنے کی تھی دیر
قبلہ رو ہو گئے سب راہ پہ آئے ہوئے شہر

ایک بوسے کی اجازت حجر اسود پر
اے مرے نور کی بارش میں نہائے ہوے شہر

منزلِ ذکر میں ہر شہر پہ چھائے ہوئے شہر
کیا ثنا ہو تری قرآن میں آئے ہوئے شہر

Poet: Iftikhar Arif

اپنا تبصرہ بھیجیں