Wo Khud Pirndo Ka Dana Linay Geya Hua Hai

غزل
وہ خود پرندوں کا دانہ لینے گیا ہوا ہے
اور اُس کے بیٹے شکار کرنے گئے ہوئے ہیں

میں کیسے باور کراؤں جا کر روشنی کو
کہ ان چراغوں پے میرے پیسے لگے ہوئے ہیں

تم ان کو چاہو تو چھوڑ سکتے ہو راستے میں
یہ لوگ ویسے بھی زندگی سے کٹے ہوئے ہیں

اسی ندامت سے اُس کے کندھے جھکے ہوئے ہیں
کہ ہم چھڑی کا سہارہ لے کے کھڑے ہوئے ہیں
Ghazal
Wo Khud Pirndo Ka Dana Linay Geya Hua Hai
Aur us ky bitay shikar karny gay howay hain

Main kisay baawr karao ja kar roshni ko
Keh in charaghon pay meray pisay lagay howay hain

Tum in ko chaho tu chor sakty ho rastay main
Yeh log wasay bhi zindagi say ktay howay hain

Isi nadamat say us ky kinday jhokay howay hain
Keh ham chahri ka sahara ly ky kehray howay hain

اپنا تبصرہ بھیجیں