Ajnabi Shaam

نظم:اجنبی شام
دھند چھائی ہوئی ہے جھیلوں پر
اڑ رہے ہیں پرند ٹیلوں پر
سب کا رخ ہے نشیمنوں کی طرف
بستیوں کی طرف بنوں کی طرف
اپنے گلوں کو لے کے چرواہے
سرحدی بستیوں میں جا پہنچے
دل ناکام میں کہاں جاؤں
اجنبی شام میں کہاں جاؤں
Nazam:Ajnabi shaam
 
Dhund Chhai Hui Hai Jhilon Par
ud rahe hain parind tilon par
 
sab ka rukh hai nashemanon ki taraf
bastiyon ki taraf banon ki taraf
 
apne gallon ko le ke charwahe
sarhadi bastiyon mein ja pahunche
 
dil-e-nakaam main kahan jaun
ajnabi sham main kahan jaun

اپنا تبصرہ بھیجیں