Tumhein Kya Zindagi Jaisi Bhi Hai

نظم: تمہیں کیا؟
زندگی جیسی بھی ہے
تم نے اس کے ہر ادا سے رنگ کی موجیں نچوڑی ہیں
تمہیں تو ٹوٹ کر چاہا گیا چہروں کے میلے میں
محبت کی شفق برسی تمہارے خال و خد پر
 
آئنے چمکے تمہاری دید سے
خوشبو تمہارے پیرہن کی ہر شکن سے 
اذن لے کر ہر طرف وحشت لٹاتی تھی
تمہارے چاہنے والوں کے جھرمٹ میں
سبھی آنکھیں تمہارے عارض و لب کی کنیزیں تھیں
 
تمہیں کیا؟
تم نے ہر موسم کی شہ رگ میں انڈیلے ذائقے اپنے
 
تمہیں کیا؟
تم نے کب سوچا
کہ چہروں سے اٹی دنیا میں تنہا سانس لیتی
ہانپتی راتوں کے بے گھر ہم سفر
کتنی مشقت سے گریبان سحر کے چاک سیتے ہیں
 
تمہیں کیا؟
تم نے کب سوچا
کہ تنہائی کے جنگل میں
سیہ لمحوں کی چبھتی کرچیوں سے کون کھیلا ہے
 
تمہیں کیا؟
تم نے کب سوچا
کہ چہروں سے اٹی دنیا میں
کس کا دل اکیلا ہے
Nazam:Tumhein Kya
Zindagi Jaisi Bhi Hai
tum ne us ke har ada se rang ki maujen nichodi hain
tumhein to tut kar chaha gaya chehron ke mele mein
mohabbat ki shafaq barsi tumhaare khal-o-khad par

 

aaine chamke tumhaari did se
khushbu tumhaare pairahan ki har shikan se
izn le kar har taraf wahshat lutati thi
tumhaare chahne walon ke jhurmut mein
sabhi aankhen tumhaare aariz-o-lab ki kanizen thin
 
tumhein kya?
tum ne har mausam ki shah-e-rag mein undele zaiqe apne
 
tumhein kya?
tum ne kab socha
ki chehron se aTi duniya mein tanha sans leti
hanpti raaton ke be-ghar ham-safar
kitni mashaqqat se gareban-e-sahar ke chaak site hain
 
tumhein kya?
tum ne kab socha
ki tanhai ke jangal mein
siyah lamhon ki chubhti kirchiyon se kaun khela hai
 
tumhein kya?
tum ne kab socha
ki chehron se ati duniya mein
kis ka dil akela hai

اپنا تبصرہ بھیجیں