Jo Bhi Izzat Ky Dar Se Dar Jaye

Jo Bhi Izzat Ky Dar Se Dar Jaye

Jo Bhi Izzat Ky Dar Se Dar Jaye
Mat kry ishq apne ghar jaye

Baat a jaye jab duaon per
Es se behtar hai banda mar jaye

Thori si aur dair samne rahe
Meri ankhon ka pait bhar jaye

Al mohim in ke ghar bhi khtaray hain
Chahay bhi tou koi kidher jahe

Haan aqida agar na qaid rakhay
Phir tou insan kuch bhi kar jaye

Be basi ki yeh akhari had hai
Meri aulad ap per jaye

Us kew cheheray per aaj udassi thi
Hye afkar alvi mar jaye

Jo bhi izzat ky dar se dar jaye
Mat kry ishq apne ghar jaye
غزل
جو بھی عزت کے ڈر سے ڈر جائے
مت کرے عشق اپنے گھر جائے

بات آ جائے جب دعاؤں پر
اس سے بہتر ہے بندہ مر جائے

تھوڑی سی اور دیر سامنے رہے
میری آنکھوں کا پیٹ بھر جائے

ال مہم ان کے گھر بھی خطرے ہیں
چاہے بھی تو کوئی کدھر جائے

ہاں عقیدہ اگر نہ قید رکھے
پھر تو انسان کچھ بھی کر جائے

بے بسی کی یہ آخری حد ہے
میری اولاد آپ پر جائے

اُس کے چہرے پر آج اداسی تھی
ہائے افکار علوی مر جائے

جو بھی عزت کے ڈر سے ڈر جائے
مت کرے عشق اپنے گھر جائے

اپنا تبصرہ بھیجیں