Chum Kar Khaak-E-Yaar Qadam Dharta Hoon

Chum Kar Khaak-E-Yaar Qadam Dharta Hoon

Chum Kar Khaak-E-Yaar Qadam Dharta Hoon
Jast bharta hoon abad paar qadam dharta hoon

Jis jaga sar nahi rakhne ki ijazat un ko
Mein wahan par bhi jigar bar qadam dharta hoon

Bar zameen-e-dil har sarkash-e-dil kash badan
Sirf mein hoon jo lagataar qadam dharta hoon

Ghazaal-e-sukhan asaar-e-ghazal shaifta hoon
Mawraye ram-o-raftaar qadam dharta hoon

Rah khud moun se nah bole keh mein hamwar hoi
Phir yeh kehna keh mein bikar qadam dharta hoon

Mard-e-janbaaz ke hote hoye maqtal weraan
Aa mere yaar ki talwar qadam dharta hoon

Khandan-e-banu hasham ki taraf se iss bar
Tum nahi mein saf-e-ansar qadam dharta hoon

Dasht ke khar-o-bazar mujhe jante hain
Mein yahan din mein kai bar qadam dharta hoon

Yeh jo mujhe naqsh ka shuhra hai basad khoob-e-dil
Baat yeh hai ke maayar qadam dharta hoon
Jast bharta hoon abad par qadam dharta hoon

Chum kar khaak-e-yaar qadam dharta hoon
Jast bharta hoon abad paar qadam dharta hoon
غزل
چوم کر خاکِ درِ یار قدم دھرتا ہوں
جست بھرتا ہوں ابد پار قدم دھرتا ہوں

جس جگہ سر نہیں رکھنے کی اجازت اُن کو
میں وہاں پر بھی جگر بار قدم دھرتا ہوں

بر زمینِ دل ہرسرکشِ دل کش بدن
صرف میں ہوں جو لگاتار قدم دھرتا ہوں

غزالِ سخن آثارِ غزل شیفتا ہوں
ماوراے رمُ رفتار قدم دھرتا ہوں

راہ خود منہ سے نہ بولے کہ میں ہموار ہوئی
پھر یہ کہنا کہ میں بیکار قدم دھرتا ہوں

مردِ جانباز کے ہوتے ہوئے مقتل ویران
آ میرے یار کی تلوار قدم دھرتا ہوں

خاندانِ بنو ہاشم کی طرف سے اِس بار
تم نہیں میں صفِ انصار قدم دھرتا ہوں

دشت کے خار و سبازار مجھے جانتے ہیں
میں یہاں دن میں کئی بار قدم دھرتا ہوں

یہ جو مجھے نقش کا شورا ہے بصد خوبیِ دل
بات یہ ہے کہ میں معیار قدم دھرتا ہوں
جست بھرتا ہوں ابد پار قدم دھرتا ہوں

چوم کر خاکِ درِ یار قدم دھرتا ہوں
جست بھرتا ہوں ابد پار قدم دھرتا ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں