Ajab Waiz Ki Deen Dari Hai Ya Rabb

غزل
عجب واعظ کی دین داری ہے یا رب
عداوت ہے اسے سارے جہاں سے
 
کوئی اب تک نہ یہ سمجھا کہ انساں
کہاں جاتا ہے، آتا ہے کہاں سے
 
وہیں سے رات کو ظلمت ملی ہے
چمک تارے نے پائی ہے جہاں سے
 
ہم اپنی درد مندی کا فسانہ
سنا کرتے ہیں اپنے رازداں سے
 
بڑی باریک ہیں واعظ کی چالیں
لرز جاتا ہے آواز اذاں سے
Ghazal
Ajab Waiz Ki Deen Dari Hai Ya Rabb
Adawat Hai Ise Sare Jahan Se

Koi Ab Tak Na Yeh Samjha Keh Insan
Kahan Jata Hai Jata Hai Ata Hai Kahan Se

Wahi Se Rahat Ko Zulmat Mili Hai
Chamak Tare Ne Paii Hai Jahan Se

Hum Apni Dard Mandi Ka Fasana
Suna Karty Hai Apne Razdan Se

Bari Bareek Hain Wa iz Ki Chalen
Laraz Jata Hai Awaz.e.Azan Se

اپنا تبصرہ بھیجیں