Raaten Guzarne Ko Teri Rahguzar Ke Sath

غزل
راتیں گزارنے کو تری رہ گزر کے ساتھ
گھر سے نکل پڑا ہوں میں دیوار و در کے ساتھ
 
دستک نے ایسا حشر اٹھایا کہ دیر تک
لرزاں رہا ہے جسم بھی زنجیر در کے ساتھ
 
کشکول تھامتے ہیں کف اعتبار سے
کرتے ہیں ہم گداگری لیکن ہنر کے ساتھ
 
اب کس طرح یہ ٹوکری سر پہ اٹھاؤں میں
سورج پڑا ہوا ہے مرے بام و در کے ساتھ
 
سورج اسی طرح ہے یہ مہتاب اسی طرح
ڈھلتے رہے ہیں یار ہی شام و سحر کے ساتھ
 
یوں ہے مری اڑان پہ بھاری مرا وجود
جیسے زمیں بندھی ہو مرے بال و پر کے ساتھ
 
تابشؔ مجھے سفر کی روایت کا پاس تھا
سو میں بھی رہ بنا کے چلا رہ گزر کے ساتھ
 
Ghazal
Raaten Guzarne Ko Teri Rahguzar Ke Sath
Ghar se nikal pada hun main diwar-o-dar ke sath

Dastak ne aisa hashr uthaya ki der tak
Larzan raha hai jism bhi zanjir dar ke sath

Kashkol thamte hain kaf-e-eatibar se
Karte hain hum gadagari lekin hunar ke sath

Ab kis tarah ye tokari sar pe uthaun main
Suraj pada hua hai mere baam-o-dar ke sath

Suraj usi tarah hai ye mahtab usi tarah
Dhalte rahe hain yar hi sham-o-sahar ke sath

Yun hai meri udan pe bhaari mera wajud
Jaise zamin bandhi ho mere baal-o-par ke sath

“Tabish’ mujhe safar ki riwayat ka pas tha
So main bhi rah bana ke chala rahguzar ke sath

اپنا تبصرہ بھیجیں