Hum Kabhi Ishq Ko Wahshat Nahin Banne dete

ہم کبھی عشق کو وحشت نہیں بننے دیتے
دل کی تہذیب کو تہمت نہیں بننے دیتے

لب ہی لب ہے تو کبھی اور کبھی چشم ہی چشم
نقش تیرے تری صورت نہیں بننے دیتے

یہ ستارے جو چمکتے ہیں پس ابر سیاہ
تیرے غم کو مری عادت نہیں بننے دیتے

ان کی جنت بھی کوئی دشت بلا ہی ہوگی
زندہ رہنے کو جو لذت نہیں بننے دیتے

دوست جو درد بٹاتے ہیں وہ نادانی میں
در حقیقت مری سیرت نہیں بننے دیتے

فکر فن کے لیے لازم مگر اچھے شاعر
اپنے فن کو کبھی حکمت نہیں بننے دیتے

وہ محبت کا تعلق ہو کہ نفرت کا ندیمؔ
رابطے زیست کو خلوت نہیں بننے دیتے

hum kabhi ishq ko wahshat nahin banne dete
dil ki tahzib ko tohmat nahin banne dete

lab hi lab hai to kabhi aur kabhi chashm hi chashm
naqsh tere teri surat nahin banne dete

ye sitare jo chamakte hain pas-e-abr-e-siyah
tere gham ko meri aadat nahin banne dete

un ki jannat bhi koi dasht-e-bala hi hogi
zinda rahne ko jo lazzat nahin banne dete

dost jo dard batate hain wo nadani mein
dar-haqiqat meri sirat nahin banne dete

fikr fan ke liye lazim magar achchhe shaer
apne fan ko kabhi hikmat nahin banne dete

wo mohabbat ka talluq ho ki nafrat ka ‘nadim’
rabte zist ko khalwat nahin banne dete

اپنا تبصرہ بھیجیں