Kahani Meri Jagah Nahi Kisi Jagah Khuda Nahi

غزل
کہیں میری جگہ نیہں کسی جگہ خدا نہیں
کسی کا گھر بڑا نہیں کسی کا دل بڑا نہیں

وہ شہر بھر کے خط اُٹھائے پھر رہی پرس میں
اور ایک خط بھی اُس نے اختتام تک پڑھا نہیں

ہم ایک غار سے نکل کر دوسری میں آگے
کہ زندگی کا ارتقا ہمارا مسلئہ نہیں

مجھے وہاں سے باز رکھنے والے کافی لوگ ہیں
تمہارا ساتھ چاہئے تمہارا مشورہ نہیں

سبھی کے رابطے میں ہے سبھی کو اُس کی کھوج ہے
وہ کون ہے کہاں سے ہے کوئی عطہ پتہ نہیں

ہمارے جیسے باغبان کو کون دے گا نوکری
وہ پھول توڑتے ہوئے زرا بھی سوچتا نہیں

میرے خلاف ہے تو کیا تمہارے حق میں ہے تو کیا
عدالتوں کا فیصلہ خدا کا فیصلہ نہیں
Ghazal
Kahin Meri Jagah Nahi Kisi Jagah Khuda Nahi
Kisi ka ghar bara nahi kisi ka dil bara nahi

Wo shehar bhar ky khat uthaye phir rahi hai pars main
Aur aik khat bhi us nay ikhtatam tak parha nahi

Hum aik ghaar sy nikl kr dusari main aa gaye
Keh zindagi ka irtiqa hamara masla nahi

Mujhy wahaan sy baaz rakhny waly kaafi Log hain
Tumhara sath chahiye tumhara mushwara nahi

Sabhi ky rabty main hai sabhi ko us ki khoj hai
Wo kon hai kahan sy hai koi ata pta nahi

Humary jisay baghban ko kon day ga naukri
Woh phool toraty huway zara bhi sochta nahi

Mery khilaf hai tu kiya tumhary haq main hai tu kiya
Adalton ka faisla khuda ka faisla nahi

اپنا تبصرہ بھیجیں