Siyah Shab Se Abhi Mehv Intiqam Hain Kia

Siyah Shab Se Abhi Mehv Intiqam Hain Kia

Siyah Shab Se Abhi Mehv Intiqam Hain Kia
Chiragh dekhna ab bhi aseer-e-baam hain kia

Har aik rang ki wehshat hamein ataaa ki hai
Hamari zaat peh khushiyon ke pal haram hain kia

Koi sabaq nahi seekha hai fail walon se
Yeh log aaj bhi waisay hi be lagaam hain kia

Zara si chout peh aanso bahanay lag jaon
Goher yeh itne hi sastay hain itne aam hain kia

Mein kitnay dushmano mein ghir chuki hoon herat hai
Kahan se aa gaye yeh log inn ke naam hain kia

Reh-e-junoon peh chalay tu chalen gay marzi se
Jo tum kahu kaye jayen woh, hum gulaam hain kia

Siyah shab se abhi mehv intiqam hain kia
Chiragh dekhna ab bhi aseer-e-baam hain kia
غزل
سیاہ شب سے ابھی محوِ انتقام ہیں کیا
چراغ، دیکھنا اب بھی اسیرِ بام ہیں کیا

ہر ایک رنگ کی وحشت ہمیں عطا کی ہے
ہماری ذات پہ خوشیوں کے پل حرام ہیں کیا

کوئی سبق نہیں سیکھا ہے فِیل والوں سے
یہ لوگ آج بھی ویسے ہی بے لگام ہیں کیا

ذرا سی چوٹ پہ آنسو بہانے لگ جاؤں
گُہر یہ اتنے ہی سستے ہیں اِتنے عام ہیں کیا

میں کتنے دشمنوں میں گہر چکی ہوں حیرت ہے
کہاں سے آ گئے یہ لوگ اِن کے نام ہیں کیا

رہِ جنوں پہ چلے تو چلیں گے مرضی سے
جو تم کہو کئے جائیں وہ, ہم غلام ہیں کیا

سیاہ شب سے ابھی محوِ انتقام ہیں کیا
چراغ، دیکھنا اب بھی اسیرِ بام ہیں کیا
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں