Samay Nah Dekh Abhi Guftagu Chali Hi Tu Hai

Samay Nah Dekh Abhi Guftagu Chali Hi Tu Hai

Samay Nah Dekh Abhi Guftagu Chali Hi Tu Hai
Mein ruk donga kisi waqt bhi ghari hi tu hai

Haseen hoti hai marzi ki mout samnay dekh
Yeh aabshar bhi darya ki khud kashi hi tu hai

Bhatka rehta hoon din bhar ujaar Kamron mein
Wasee ghar mein tajarud bhi be ghari hi tu hai

Tera junoon hai jab tak, to hat utha khush reh
Keh aarzah hai mere dost aarzi hi tu hai

Tere badan ke mutabiq dhaley gi kuch din tak
Abhi chubhay gi udaasi, abhi nai hi tu hai

Hamaray deen mein jaiz hai teen roz ka sog
Bichar ke uss se abhi raat dosri hi tu hai

Issi ko banttay rehte hain milnay walo mein
Hamaray pass izafi teri kami hi tu hai

Samay nah dekh abhi guftagu chali hi tu hai
Mein ruk donga kisi waqt bhi ghari hi tu hai
غزل
سمے نہ دیکھ، ابھی گفتگو چلی ہی تو ہے
میں روک دوں گا کسی وقت بھی گھڑی ہی تو ہے

حسین ہوتی ہے مرضی کی موت ، سامنے دیکھ
یہ آبشار بھی دریا کی خود کشی ہی تو ہے

بھٹکتا رہتا ہوں دن بھر اُجاڑ کمروں میں
وسیع گھر میں تجرد بھی بے گھری ہی تو ہے

ترا جنون ہے جب تک، تو حط اُٹھا، خوش رہ
کہ عارضہ ہے مرے دوست عارضی ہی تو ہے

ترے بدن کے مطابق ڈھلے گی کچھ دن تک
ابھی چبھے گی اداسی ، ابھی نئی ہی تو ہے

ہمارے دین میں جائز ہے تین روز کا سوگ
بچھڑ کے اُس سے ابھی رات دوسری ہی تو ہے

اِسی کو بانٹتے رہتے ہیں ملنے والو میں
ہمارے پاس اِضافی تیری کمی ہی تو ہے

سمے نہ دیکھ، ابھی گفتگو چلی ہی تو ہے
میں روک دوں گا کسی وقت بھی گھڑی ہی تو ہے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں