Woh Bhoolta Hay , Na Dil Men Utaarta Hay Mujhe

غزل
وہ بھولتا ہے نہ دل میں اتارتا ہے مجھے
ہمیشہ مار محبت کی مارتا ہے مجھے
 
میں اس کا لمحہ موجود ہوں مگر وہ شخص
فضول وقت سمجھ کر گزارتا ہے مجھے
 
بظاہر ایسا نہیں پیڑ اس حویلی کا
ہوا چلے تو بہت پھول مارتا ہے مجھے
 
اس کے ہاتھ سے جاتا ہوں مال و زر کی طرح
وہ روز قرض سمجھ کر اتارتا ہے مجھے
Ghazal
Woh Bhoolta Hay , Na Dil Men Utaarta Hay Mujhe
Hamesha Maar Mohabbat Ki Maarta Hay Mujhe
 
Men Uska Lamha Mujood Hoon, Magar Who Shakhs
Fazool Waqt Samajh Kar, Guzaarta Hay Mujhe
 
Ba-Zaahir Aisa Nahi Pairr Is Haweli Ka
Hawa Chalay Tou Bohat Phool Maarta Hay Mujhe
 
Men Us K Haath Men Jata Hoon Mal-o-Zar Ki Tarha
Who Roz Qarz Samajh Kar Utaarta Hay Mujhe

اپنا تبصرہ بھیجیں