Ham Tou Dewane Hain Rimzin Na

Ham Tou Dewane Hain Rimzin Na

Ham Tou Dewane Hain Rimzin Na Kanaya Janen
Juz gham-e-ishq har ek zakham ko maya janen

Kaj kalahi peh na janen keh yeh sab aap ki nazar
Sha khuban hamein bas apni riaaya janen

Aaj ke baad tou ham par bhi yeh lazim hai keh ham
Apni boi hoi faslon ko paraya janen

Ham se kia kon sa suraj hai sar-e-bam buland
Ham tou wo log hain har dhop ko saya janen

Khaima-e-sabar se takra ke palatne lagay teer
Ab unhein seena-e-qatil mein dar aaya janen

Ham tou dewane hain rimzin na kanaya janen
Juz gham-e-ishq har ek zakham ko maya janen
غزل
ہم تو دیوانے ہیں رمزیں نہ کنایہ جانیں
جز غمِ عشق ہر اک زخم کو مایا جانیں

کج کلاہی پہ نہ جائیں کہ یہ سب آپ کی نذر
شہ خوباں ہمیں بس اپنی رعایا جانیں

آج کے بعد تو ہم پر بھی یہ لازم ہے کہ ہم
اپنی بوئی ہوئی فصلوں کو پرایا جانیں

ہم سے کیا کون سا سورج ہے سرِ بام بلند
ہم تو وہ لوگ ہیں ہر دھوپ کو سایہ جانیں

خیمہ صبر سے ٹکرا کے پلٹنے لگے تیر
اب انھیں سینہ قاتل میں در آیا جانیں

ہم تو دیوانے ہیں رمزیں نہ کنایہ جانیں
جز غمِ عشق ہر اک زخم کو مایا جانیں

اپنا تبصرہ بھیجیں