Mujhe Pehle Pehal Lagta Tha Zaati Masla Hai

Mujhe Pehle Pehal Lagta Tha Zaati Masla Hai

Mujhe Pehle Pehal Lagta Tha Zaati Masla Hai
Mein phir samjha mohabbat kainati masla hai

Parinday qaid hain tum chehchahat chahte ho
Tumhein tu acha khasa nafsiati masla hai

Bari mushkil hai bantay silsiloon mein yeh tawaquf
Hamaray rabtoon ki be sabati masla hai

Woh kehtay hain keh jo hoga wo aagay ja ke hoga
To yeh duniya bhi koi tajurbati masla hai

Hamein pura junoon darkaar hai uss par sukoon bhi
Hamari nasal mein ik jinyati masla hai

Kabhi tum mil nahi patay kabhi fursat nadarid
Hamaray saath bas yeh do nukaati masla hai

Hamara wasal bhi tha ittifaqi masla tha
Hamara hijr bhi hai hadsati masla

Mujhe pehle pehal lagta tha zaati masla hai
Mein phir samjha mohabbat kainati masla hai
غزل
مجھے پہلے پہل لگتا تھا ذاتی مسئلہ ہے
میں پھر سمجھا محبت کائناتی مسئلہ ہے

پرندے قید ہیں تم چہچہاہٹ چاہتے ہو
تمہیں تو اچھا خاصآ نفسیاتی مسئلہ ہے

بڑی مشکل ہے بنتے سلسلوں میں یہ توقف
ہمارے رابطوں کی بے ثباتی مسئلہ ہے

وہ کہتے ہیں کہ جو ہوگا وہ آگے جا کے ہوگا
تو یہ دنیا بھی کوئی تجرباتی مسئلہ ہے

ہمیں پورا جنوں درکار ہے اُس پر سکوں بھی
ہماری نسل میں اک جینیاتی مسئلہ ہے

کبھی تم مل نہیں پاتے کبھی فرصت ندارد
ہمارے ساتھ بس یہ دو نکاتی مسئلہ ہے

ہمارا وصل بھی تھا اتفاقی مسئلہ تھا
ہمارا ہجر بھی ہے حادثاتی مسئلہ ہے

مجھے پہلے پہل لگتا تھا ذاتی مسئلہ ہے
میں پھر سمجھا محبت کائناتی مسئلہ ہے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں