Jab Se Haki Sair Ko Jaya Karta Tha| Tehzeeb Hafi

Jab Se Haki Sair Ko Jaya Karta Tha| Tehzeeb Hafi

Jab Se Haki Sair Ko Jaya Karta Tha
Mein aankhon se khaak uraya karta tha

Dhoond ke hota tha goan mein aik darwaish
Ashko ke anbar lagaya karta tha

Mil ke sehra rootha karti thi mujh se
Mein sehra se rait churaya karta tha

Betha rehta tha sahil par sara din
Darya mujh se jaan churaya karta tha

Thak jata tha badal saya karte karte
Aur phir mein badal peh saya karta tha

Jab se haki sair ko jaya karta tha
Mein aankhon se khaak uraya karta tha
غزل
جب سے ہاکی سیر کو جایا کرتا تھا
میں آنکھوں سے خاک اُڑایا کرتا تھا

ڈھونڈ کے ہوتا تھا گاؤں میں ایک درویش
اشکو کے انبار لگایا کرتا تھا

مل کے صحرا روٹھا کرتی تھی مجھ سے
میں صحرا سے ریت چرایا کرتا تھا

بیھٹا رہتا تھا ساحل پر سارا دن
دریا مجھ سے جان چڑایا کرتا تھا

تھک جاتا تھا بادل سایا کرتے کرتے
اور پھر میں بادل پہ سایا کرتا تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں