Jis Ke Raste Mein Utar Jane Ka Dharka Laga Rahe

Jis Ke Raste Mein Utar Jane Ka Dharka Laga Rahe

Jis Ke Raste Mein Utar Jane Ka Dharka Laga Rahe
Woh kabhi hum safar nahi hota

Koi aap ko dukh de kar khush ho jaye
To us se dukh le kar khush ho ja

Aur us ko salam kar ke kaho
Aap hamare nahi janab
To hum bhi aap ke nahi

Jis ke raste mein utar jane ka dharka lagar hai
Woh kabhi hum safar nahi hota
نظم
جس کے رستے میں اُتر جانے کا دھڑکا لگا رہے
وہ کبھی ہم سفر نہیں ہوتا

کوئی آپ کو دکھ دے کر خوش ہو جائے
تو اُس سے دکھ لے کر خوش ہو جا

اور اُس کو سلام کرکے کہو
آپ ہمارے نہیں جناب
تو ہم بھی آپ کے نہیں

جس کے رستے میں اُتر جانے کا دھڑکا لگار ہے
وہ کبھی ہم سفر نہیں ہوتا

اپنا تبصرہ بھیجیں