Niyat-E-Shauq Bhar Na Jaye Kahin

غزل
نیت شوق بھر نہ جائے کہیں
تو بھی دل سے اتر نہ جائے کہیں

آج دیکھا ہے تجھ کو دیر کے بعد
آج کا دن گزر نہ جائے کہیں

نہ ملا کر اداس لوگوں سے
حسن تیرا بکھر نہ جائے کہیں

آرزو ہے کہ تو یہاں آئے
اور پھر عمر بھر نہ جائے کہیں

جی جلاتا ہوں اور سوچتا ہوں
رائیگاں یہ ہنر نہ جائے کہیں

آؤ کچھ دیر رو ہی لیں ناصرؔ
پھر یہ دریا اتر نہ جائے کہیں
Ghazal
Niyat-E-Shauq Bhar Na Jaye Kahin
Tu Bhi Dil Se Utar Na Jaye Kahin

Aaj Dekha Hai Tujh Ko Der Ke Baad
Aaj Ka Din Guzar Na Jaye Kahin

Na Mila Kar Udaas  Logon Se
Husn Tera Bikhar Na Jae Kahin

Aarzu Hai Ki Tu Yahan Aaye
Aur Phir Umar Bhar Na Jaye Kahin

Ji Jalata Hun Aur Sochta Hun
Raegan Ye Hunar Na Jaye Kahin

Aao Kuch Der Ro Hi Len ‘Nasir’
Phir Ye Dariya Utar Na Jae Kahin

اپنا تبصرہ بھیجیں