Ham Ne Jab Bhi Usay Bolaya Hai

Ham Ne Jab Bhi Usay Bolaya Hai

Ham Ne Jab Bhi Usay Bolaya Hai
Wo ghari do ghari ko aya hai

Aik dil hai hamare pehlo mein
Wo bhi apna nahi paraya hai

Shadmaa hain yeh gham-zada hain ham
Jane kia kefiyat khudaya hai

Kho diya apne ap ko ham ne
Tab kahin yeh maqam paya hai

Dil ki takhti pe ham ne us ka naam
Kabhi likha hai kabhi metaya hai

Chara sazon hamein howa hai pyar
Sar mein soda nahi samaya hai

Koi afsana lag raha hai sho’our
Tum ne jo waqia sunya hai

Ham ne jab bhi usay bolaya hai
Wo ghari do ghari ko aya hai
غزل
ہم نے جب بھی اُسے بولایا ہے
وہ گھڑی دو گھڑی کو آیا ہے

ایک دل ہے ہمارے پہلو میں
وہ بھی اپنا نہیں پرایا ہے

شادماں ہیں یہ غم زدہ ہیں ہم
جانے کیا کفیت خدایا ہے

کھو دیا اپنے آپ کو ہم نے
تب کہیں یہ مقام پایا ہے

دل کی تختی پہ ہم نے اُس کا نام
کبھی لکھا ہے کبھی مٹایا ہے

چارہ سازوں ہمیں ہوا ہے پیار
سر میں سودا نہیں سمایا ہے

کوئی افسانہ لگ رہا ہے شعورؔ
تم نے جو واقعہ سنایا ہے

ہم نے جب بھی اُسے بولایا ہے
وہ گھڑی دو گھڑی کو آیا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں