Pabandi: Mere Aaqa Ko Gila Hai

نظم:پابندی
میرے آقا کو گلہ ہے کہ میری حق گوئی
راز کیوں کھولتی
اور میں پوچھتا ہوں تیری سیاست فن میں
زہر کیوں گھولتی ہے
میں وہ موتی نہ بنوں گا جسے ساحل کی ہوا
رات دن رولتی ہے
یوں بھی ہوتا کہ آندھی کے مقابل چڑیا
اپنے پر تولتی ہے
اک بھڑکتے ہوئے شعلے پہ ٹپک جائے اگر
بوند بھی بولتی ہے
Poem:Pabandi
Mere Aaqa Ko Gila Hai Ki Meri Haq- Goi
raaz kyun kholti
aur main puchhta hun teri siyasat fan mein
zahr kyun gholti hai
main wo moti na banunga jise sahil ki hawa
raat din rolti hai
yun bhi hota ki aandhi ke muqabil chidiya
apne par taulti hai
ek bhaDakte hue shole pe Tapak jae agar
bund bhi bolti hai

اپنا تبصرہ بھیجیں