Mujhy ab dar nahi lagta

مجھے اب ڈر نہیں لگتا:
کسی کے دور جانے سے
تعلق ٹوٹ جانے سے
کسی کے مان جانے سے
کسی کے روٹھ جانے سے
مجھے اب ڈر نہیں لگتا
کسی کو آزمانے سے
کسی کے آزمانے سے
کسی کو یاد رکھنے سے
کسی کو بھول جانے سے
مجھے اب ڈر نہیں لگتا
کسی کو چھوڑ دینے سے
کسی کے چھوڑ جانے سے
نا شمع کو جلانے سے
نا شمع کو بجھانے سے
مجھے اب ڈر نہیں لگتا
اکیلے مسکرانے سے
کبھی آنسو بہانے سے
نا اس سارے زمانے سے
حقیقت سے فسانے سے
مجھے اب ڈر نہیں لگتا
کسی کی نارسائی سے
کسی کی پارسائی سے
کسی کی بے وفائی سے
کسی دکھ انتہائی سے
مجھے اب ڈر نہیں لگتا
نا تو اس پار رہنے سے
نا تو اس پار رہنے سے
نا اپنی زندگانی سے
نا اک دن موت آنے سے
مجھے اب ڈر نہیں لگتا
Mujhy ab darr nahi lagta:
kisi ke dur jaane se
talluq tut jaane se
kisi ke man jaane se
kisi ke ruth jaane se
mujhe ab dar nahin lagta

kisi ko aazmane se
kisi ke aazmane se
kisi ko yaad rakhne se
kisi ko bhul jaane se
mujhe ab dar nahin lagta

kisi ko chhod dene se
kisi ke chhod jaane se
na shama ko jalane se
na shama ko bujhane se

mujhe ab dar nahin lagta
akele muskurane se
kabhi aansu bahane se
na is sare zamane se
haqiqat se fasane se

mujhe ab dar nahin lagta
kisi ki na-rasai se
kisi ki parsai se
kisi ki bewafai se
kisi dukh intihai se

mujhe ab dar nahin lagta
na to is par rahne se
na to us par rahne se
na apni zindagani se
na ek din maut aane se
mujhe ab dar nahin lagta

اپنا تبصرہ بھیجیں