Teri Taraf Mera Khayal Kia Gaya

Teri Taraf Mera Khayal Kia Gaya

Ghazal
Teri Taraf Mera Khayal Kia Gaya
Keh phir mein tujhko sochta chala gaya

Yeh sheher ban raha tha mere samne
Yeh geet mere samne lekha gaya

Yeh wasal sari umar per moheet hai
Yeh hijr aik raat mein sama gaya

Mujhe kisi ki aas thi na piyaas thi
Yeh phool mujhe bhool kar diya gaya

Bichar ke sans khinchna mohaal tha
Mein zindagi se hath khinchta gaya

Mein aik roz dasht kia gaya magar
Wo bagh mere hath se chala gaya

Teri taraf mera khayal kia gaya
Keh phir mein tujhko sochta chala gaya
غزل
تیری طرف میرا خیال کیا گیا
کہ پھر میں تجھکو سوچتا چلا گیا

یہ شہر بن رہا تھا میرے سامنے
یہ گیت میرے سامنے لکھا گیا

یہ وصل ساری عمر پر محیط ہے
یہ ہجر ایک رات میں سما گیا

مجھے کسی کی آس تھی نہ پیاس تھی
یہ پھول مجھے بھول کر دیا گیا

بچھڑ کے سانس کھنچنا محال تھا
میں زندگی سے ہاتھ کھنچتا گیا

میں ایک روز دشت کیا گیا مگر
وہ باغ میرے ہاتھ سے چلا گیا

تیری طرف میرا خیال کیا گیا
کہ پھر میں تجھکو سوچتا چلا گیا

اپنا تبصرہ بھیجیں