Aaye Andhery Dekh Lay Moh Tera Kala Ho Gaya

Aaye Andhery Dekh Lay Moh Tera Kala Ho Gaya

Aaye Andhery Dekh Lay Moh Tera Kala Ho Gaya
Maa ne aankhen khol dein ghar mein ujala ho gaya

Rai ke danay brabar bhi na tha jis ka wajod
Nafrton ke bech mein reh kar wo hamala ho gaya
 
Sheher ko jungel bana denay mein jo mashoor tha
Aaj kal suntay hain wo allah wala ho gaya
 
Ham garebon mein chalay aaye bahut acha kiya
Aaj thori dair ko ghar mein ujala ho gaya
 
Aaye andhery dekh lay moh tera kala ho gaya
Maa ne aankhen khol dein ghar mein ujala ho gaya
غزل
اے اندھیرے دیکھ لے منہ تیرا کالا ہو گیا
ماں نے آنکھیں کھول دیں گھر میں اجالا ہو گیا
 
رائی کے دانے برابر بھی نہ تھا جس کا وجود
نفرتوں کے بیچ رہ کر وہ ہمالا ہو گیا
 
ایک آنگن کی طرح یہ شہر تھا کل تک مگر
نفرتوں میں ٹوٹ کر موتی کی مالا ہو گیا
 
شہر کو جنگل بنا دینے میں جو مشہور تھا
آج کل سنتے ہیں وہ اللہ والا ہو گیا
 
ہم غریبوں میں چلے آئے بہت اچھا کیا
آج تھوڑی دیر کو گھر میں اجالا ہو گیا
 
اے اندھیرے دیکھ لے منہ تیرا کالا ہو گیا
ماں نے آنکھیں کھول دیں گھر میں اجالا ہو گیا
 

اپنا تبصرہ بھیجیں