Dekh Kisay Dhul Gay Hain Giryha O Zare Ky Bad

غزل
دیکھ کیسے دُھل گئے ہیں گریہ و زاری کے بعد
آسماں بارش کے بعد اور میں ازاداری کے بعد

تو پرندوں سے لدی شاخ بنا لے مجھ کو
زندگی اپنی طرف اور جھکا لے مجھ کو

مانتا ہوں مجھے عشق نہیں ہے تجھ سے
مگر اس وہم سے اب کون نکالے مجھ کو

ایک معصوم سی تتلی کو مسلنے والے
تو تُو دیتا تھا حدیثوں کے حوالے مجھ کو
Ghazal
Dekh Kisay Dhul Gay Hain Giryha O Zare Ky Bad
Asmaa barish ky bad aur main azadare ky bad

To prindo say ladi shakh bana lay mujhko
Zandagi apni taraf aur jhoka lay mujhko

Manta hun mujhy ishq nahi hai tujh say
Magar es wahim say ab kon nikalay mujh ko

Aik masoom si tatli ko masalany walay
Tu to deta tha hadiso ky hawaly mujhko

اپنا تبصرہ بھیجیں