Apni Hi Sada Sunun Kahan Tak

غزل
اپنی ہی صدا سنوں کہاں تک
جنگل کی ہوا رہوں کہاں تک

ہر بار ہوا نہ ہوگی در پر
ہر بار مگر اٹھوں کہاں تک

دم گھٹتا ہے گھر میں حبس وہ ہے
خوشبو کے لئے رکوں کہاں تک

پھر آ کے ہوائیں کھول دیں گی
زخم اپنے رفو کروں کہاں تک

ساحل پہ سمندروں سے بچ کر
میں نام ترا لکھوں کہاں تک

تنہائی کا ایک ایک لمحہ
ہنگاموں سے قرض لوں کہاں تک

گر لمس نہیں تو لفظ ہی بھیج
میں تجھ سے جدا رہوں کہاں تک

سکھ سے بھی تو دوستی کبھی ہو
دکھ سے ہی گلے ملوں کہاں تک

منسوب ہو ہر کرن کسی سے
اپنے ہی لیے جلوں کہاں تک

آنچل مرے بھر کے پھٹ رہے ہیں
پھول اس کے لئے چنوں کہاں تک
Ghazal
Apni Hi Sada Sunun Kahan Tak
Jangal ki hawa rahun kahan tak
 
Har bar hawa na hogi dar par
Har bar magar uthun kahan tak
 
Dam ghatta hai ghar mein habs wo hai
Khushbu ke liye rukun kahan tak
 
Phir aa ke hawaen khol dengi
Zakhm apne rafu karun kahan tak
 
Sahil pe samundaron se bach kar
Main nam tera likhun kahan tak
 
Tanhai ka ek ek lamha
Hangamon se qarz lun kahan tak
 
Gar lams nahin to lafz hi bhej
Main tujh se juda rahun kahan tak
 
Sukh se bhi to dosti kabhi ho
Dukh se hi gale milun kahan tak
 
Mansub ho har kiran kisi se
Apne hi liye jalun kahan tak
 
Aanchal mere bhar ke phat rahe hain
Phool us ke liye chunun kahan tak

اپنا تبصرہ بھیجیں