Yeh Shayari Yeh Mere Seenay Main Dabi Hoi Aag

Ghazal
 
Yeh Shayari Yeh Meray Seenay Main Dabi Hoi Aag
Bhadak uthay ge kabhi meri jamah ki hoi aag
 
Main ch’hoo raha hun tera jism khuwab ke andar
Bujha raha hun main tasweer main lagi hoi aag
 
Khizaan main door rakho machiso ko jungle se
Dekhai deti nahi ped main chupi hoi aag
 
Main kat’ta hun abhi tak katay hue lafz
Main taapta hun abhi tak bujhi hoi aag
 
Main ek umer se jal bujh raha hun un kay sabab
Tera bacha howa pani teri bachi hoi aag
غزل
یہ شاعری یہ میرے سینے دبی ہوئی آگ
بھڑک اُٹھے گئی کبھی میری جمع کی ہوئی آگ
 
میں چھو رہا ہوں تیرا جسم خواب کے اندر
بجھا رہا ہوں میں تصویر میں لگی ہوئی آگ
 
خزاں میں دور رکھو ماچسوں کو جنگل سے
دیکھائی دیتی نہیں پیڑ میں چھپی ہوئی آگ
 
میں کاٹتا ہوں ابھی تک وہی کٹے ہوئے لفظ
میں تاپتا ہوں ابھی تک وہی بجھی ہوئی آگ
 
یہی دیا تجھے پہلی نظر میں بھایا تھا
خرید لایا میں تیری پسند کی ہوئی آگ
 
میں اک عمر سے جل بجھ رہا ہوں ان کے سبب
تیرا بچا ہوا پانی تیری بچی ہوئی آگ

اپنا تبصرہ بھیجیں