Ek Din Zuban Sakoot Ki Pori Banaunga

Ek Din Zuban Sakoot Ki Pori Banaunga

Ek Din Zuban Sakoot Ki Pori Banaunga
Mein guftagu ko ghair zaroori banaunga

Tasveer mein banaon ga donon ke hath aur
Donon mein aik hath ki dori banaunga

Muddat samait jumla zawabit hoon te shudda
Yani talluqat uboori banaunga

Tujh ko khabar nah hogi keh mein aas pass hoon
Iss hazri ko huzoori banaunga

Rangon peh ikhtiyar agar mil saka kabhi
Teri siyah putliyaan bhori banaunga

Jari hai apni zaat peh tehqeeq aaj kal
Mein bhi khala peh aik theory banaunga

Mein chaah kar woh shakal mukammal nah kar saka
Uss ko bhi lag raha tha adhoori banaunga

Ek din zuban sakoot ki pori banaunga
Mein guftagu ko ghair zaroori banaunga
غزل
اِک دن زباں سکوت کی پوری بناؤں گا
میں گفتگو کو غیر ضروری بناؤں گا

تصویر میں بناؤں گا دونوں کے ہاتھ اور
دونوں میں ایک ہاتھ کی دوری بناؤں گا

مدت سمیت جملہ ضوابط ہوں طے شدہ
یعنی تعلقات عبوری بناؤں گا

تجھ کو خبر نہ ہوگی کہ میں آس پاس ہوں
اِس حاضری کو حضوری بناؤں گا

رنگوں پہ اختیار اگر مل سکا کبھی
تیری سیاہ پتلیاں بھوری بناؤں گا

جاری ہے اپنی ذات پہ تحقیق آج کل
میں بھی خلا پہ ایک تھیوری بناؤں گا

میں چاہ کر وہ شکل مکمل نہ کر سکا
اُس کو بھی لگ رہا تھا ادھوری بناؤں گا

اِک دن زباں سکوت کی پوری بناؤں گا
میں گفتگو کو غیر ضروری بناؤں گا
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں