Tumhare Hijr Ki Deewar Pehle Aan Bani

Tumhare Hijr Ki Deewar Pehle Aan Bani

Tumhare Hijr Ki Deewar Pehle Aan Bani
Phir uss ke baad udaasi bhi khandan bani

Daleel jis jagah be kar jane wali ho
Wahan peh sunti hoon sab ki mein be zubaan bani

Safar mein dhool aur aankhon mein dhund thi num ki
Jo rasta dhoondnay walon ka imtihaan bani

Mujhe mitane mein umaren lagai theen sab ne
Mein kitni mehnaton ke baad be nishaan bani

Kisi ne khainch ke bahir nahi nikala mujhe
Jab apne aap se lipti rahi thakaan bani

Yeh log parhtay thay lekin samjh nah pate thay
Kuch aise uljhay hawalon se dastan bani

Hamare purkhon ne miti mein khawab boye thay
Wohi to aakhri peerhi thi jo kisan bani

Tumhare hijr ki deewar pehle aan bani
Phir uss ke baad udaasi bhi khandan bani
غزل
تمہارے ہجر کی دیوار پہلے آن بنی
پھر اُس کے بعد اُداسی بھی خاندان بنی

دلیل جس جگہ بے کار جانے والی ہو
وہاں پہ سنتی ہوں سب کی میں بے زبان بنی

سفر میں دھول اور آنکھوں میں دھند تھی نم کی
جو رستہ ڈھونڈنے والوں کا امتحان بنی

مجھے مٹانے میں عمریں لگائی تھیں سب نے
میں کتنی محنتوں کےبعد بے نشان بنی

کسی نے کھینچ کے باہر نہیں نکالا مجھے
جب اپنے آپ سے لپٹی رہی تھکان بنی

یہ لوگ پڑھتے تھے لیکن سمجھ نہ پاتے تھے
کچھ ایسے اُلجھے حوالوں سے داستان بنی

ہمارے پُرکھوں نے مٹی میں خواب بوئے تھے
وہی تو آخری پیڑھی تھی جو کسان بنی

تمہارے ہجر کی دیوار پہلے آن بنی
پھر اُس کے بعد اُداسی بھی خاندان بنی
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں