Kisay Us Nay Yeh Sab Kuch Mujh Say Chup Kar Badla

غزل

کیسے اُس نے یہ سب کچھ مجھ سے چھپ کر بدلا
چہرہ بدلا راستہ بدلا بعد میں گھر بدلا
میں اُس کے بارے میں یہ کہتا تھا لوگوں سے
میرا نام بدل دینا وہ شخص اگربدلا
وہ بھی خوش تھا اُس نے دل دے کر دل مانگا ہے
میں بھی خوش ہوں میں نے پتھر سے پتھر بدلا
میں نے کہا میری خاطر خود کو بدلو گئے
پھر اُس نے نظریں بدلی اور نمبر بدلا
Ghazal
Kisay Us Nay Yeh Sab Kuch Mujh Say Chup Kar Badla
chehra badla rasta badla bad main ghar badla
main us kay baray main yeh kehta tha logo say
mera naam badal dana wo shakhs agar badla
wo bhi khush tha us nay dil day kar dil manga hai
main bhi khush hun main nay pathar sy pathar badla
main nay kaha meri khatar khud ko badlo gay
phir us nay nazrein badle aur number badla

اپنا تبصرہ بھیجیں