Bata Raha Hai Shikari Yeh Iztarar Tera

Bata Raha Hai Shikari Yeh Iztarar Tera

Bata Raha Hai Shikari Yeh Iztarar Tera
Banon gi daam mein aatay hi mein shikar tera

Khizan raseedah darakhton mein kar usay shamil
Yeh ishq hai samar aaur nah saya daar tera

Sadaaye chasham ko tou janta nahi shayad
Karegi muddaton peecha meri pukaar tera

Tou mere saath rawayye mein behtari le aa
Yeh log naam nah rakh den sitam shaair tera

Maqam-e-be hasi par lai be basi keh mujhe
Koi bhi dukh nahi baqi nah intezaar tera

Tere hi dhokay se duniya samjh mein aai hai
Lehaza shukriya aa shakhs be shumaar tera

Wohi hai jan ka dushman bana howa komal
Jo barha mujhe kehta tha jaan nisaar tera

Bata raha hai shikari yeh iztarar tera
Banon gi daam mein aatay hi mein shikar tera
غزل
بتا رہا ہے شکاری یہ اضطرار ترا
بنوں گی دام میں آتے ہی میں شکار ترا

خزاں رسیدہ درختوں میں کر اُسے شامل
یہ عشق ہے ثمر آور نہ سایہ دار، ترا

صدائے چشم کو تو جانتا نہیں شاید
کرے گی مدتوں پیچھا مری پکار ترا

تو میرے ساتھ رویے میں بہتری لے آ
یہ لوگ نام نہ رکھ دیں ستم شعار ترا

مقامِ بے حسی پر لائی بے بسی کہ مجھے
کوئی بھی دکھ نہیں باقی، نہ اِنتظار ترا

ترے ہی دھوکے سے دنیا سمجھ میں آئی ہے
لہذا شکریہ اے شخص بے شمار ترا

وہی ہے جان کا دشمن بنا ہوا کومل
جو بارہا مجھے کہتا تھا جانثار ترا

بتا رہا ہے شکاری یہ اضطرار ترا
بنوں گی دام میں آتے ہی میں شکار ترا
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں