Yeh Soch Kar Mera Sehra Main Je Nahi Lagta

Ghazal
Yeh Soch Kar Mera Sehra Main Je Nahi Lagta
Main shamil safha-e- awarge nahi lagta

Kabhi kabhi wo khuda ban kar sath chalta hai
Kabhi kabhi wo insan bhi nahi lagta

Yaqeen kyun nahi ata tujhy mere dil per
Yeh phal kaha say tujhy mausami nahi lagta

Main chahat hun wo meri jabin per bosa day
Magr jali hoi roti ko ghee nahi lagta

Teray khayal se agay bhi aik dunya hai
Tera khayal mujhy sar-sari nahi lagta

Main us kay pass kisi kaam say nahi ata
Usay yeh kaam koi kaam hi nahi lagta 
غزل
یہ سوچ کر میرا صحرا میں جی نہیں لگتا
میں شاملِ صفِ آوارگی نہیں لگتا
 
کبھی کبھی وہ خدا بن کر ساتھ چلتا ہے
کبھی کبھی تو وہ انسان بھی نہیں لگتا
 
یقیں کیوں نہیں آتا تجھے میرے دل پر
یہ پھل کہاں سے تجھے موسمی نہیں لگتا
 
میں چاہتا ہوں وہ میری جبیں پر بوسہ دے
مگر جلی ہوئی روٹی کو گھی نہیں لگتا
تیرے خیال سے آگے بھی ایک دنیا ہے
تیرا خیال مجھے سرسری نہیں لگتا
میں اُس کے پاس کسی کام سے نہیں آتا
اُسے یہ کام کوئی کام ہی نہیں لگتا

اپنا تبصرہ بھیجیں