Mein Qalb-E-Ishq Hoon Wehshat Ka

Mein Qalb-E-Ishq Hoon Wehshat Ka

Mein Qalb-E-Ishq Hoon Wehshat Ka Khoon Khainchta Hoon
Idhar udhar se musalsal junoon khainchta hoon

Dhakailta hoon badan se dhowen ke sath malal
Mein kash nahi rag-o-pay mein sukoon khainchta hoon

Kabhi kabhi kisi thandi sarak peh raat gaye
Kisi ki di hoi jarsi se owon khainchta hoon

Shaded habas ki zad mein jab aaye khita-e-chasham
Tab uss zameen ki taraf moon soon khainchta hoon

Kisi ki yaad se bojhal yeh teen bhaari din
Sabhi guzartay hoon gay mein june khainchta hoon

Udaasiyon ki ragar se bana hoon maqnatees
So khud mein gham ka bohat loh-e-chon khainchta hoon

Kisi sahare ki khwahish ke istaaray hain
Yeh kaghazon peh jo aksar satoon khainchta hoon

Koi sitara badan naam poochta hai to mein
Umair bol ke najmi ka noon khainchta hoon

Mein qalb-e-ishq hoon wehshat ka khoon khainchta hoon
Idhar udhar se musalsal junoon khainchta hoon
غزل
میں قلبِ عشق ہوں ، وحشت کا خون کھینچتا ہوں
اِدھر اُدھر سے مسلسل جنوں کھینچتا ہوں

دھکیلتا ہوں بدن سے دھوئیں کے ساتھ ملال
میں کش نہیں رگ و پے میں سکون کھینچتا ہوں

کبھی کبھی کسی ٹھنڈی سڑک پہ رات گئے
کسی کی دی ہوئی جرسی سے اون کھینچتا ہوں

شدید حبس کی زد میں جب آئے خطہِ چشم
تب اُس زمیں کی طرف مون سون کھینچتا ہوں

کسی کی یاد سے بوجھل یہ تین بھاری دن
سبھی گزارتے ہوں گے میں جون کھینچتا ہوں

اُداسیوں کی رگڑ سے بنا ہوں مقناطیس
سو خود میں غم کا بہت لوہ چون کھینچتا ہوں

کسی سہارے کی خواہش کے استعارے ہیں
یہ کاغذوں پہ جو اکثر ستون کھینچتا ہوں

کوئی ستارہ بدن نام پوچھتا ہے تو میں
عمیر بول کے نجمی کا نون کھینچتا ہوں

میں قلبِ عشق ہوں ، وحشت کا خون کھینچتا ہوں
اِدھر اُدھر سے مسلسل جنوں کھینچتا ہوں
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں