Ab Itna Hum Mizaj E Ghamay Yar Kon Hai

غزل

اب اتنا ہم مزاجِ غمے یار کون ہے
میری طرح کا اور طرح دار کون ہے

اندازہ مت لگائیے بس بیٹھ جائیے
خوشبو بتائے گی پسِ دیوار کون ہے

تاریخ ہے تو وہ بھی تمہاری لکھی ہوئی
اب تم بتاؤ گے ہمہیں غدار کون ہے

یہ تو بتائے گا تیرے قابل کوئی نہیں
یہ میں بتاؤں گا میرا معیار بہت ہے

تم سے معاملہ ہے تو پھر درمیان میں
یہ پھول کون ہوتا ہے تلوار کون ہے

Ghazal
Ab Itna Hum Mizaj E Ghamay Yar Kon Hai
Meri tarha ka aur tarha-dar kon hai

Andaza mat lagaiye bas bath jayaiye
Khushboo bata-e-ge ps-e-diwar kon hai

Tareekh hai to wo bhi tumhare lakhi hoi
Ab tum batao gay humain ghadar kon hai

Yeh to bata-e-ga teray kabil koi nahi
Yeh main bataon ga mera meyar bhout hai

Tum sy mo.amla hai to phir darmiyan main
 Yeh phool kon hota hai yeh talwar kon hai

اپنا تبصرہ بھیجیں