Jo Bhi Kuch Hai Muhabbat Ka Phelao Hai

جو کچھ بھی ہے محبت کا پھیلاؤ ہے :  
تیرے میرے ابد کا کنارہ ہے یہ
استعارہ ہے یہ
روپ کا داؤ ہے
پیار کا گھاؤ ہے
جو کچھ بھی ہے محبت کا پھیلاؤ ہے
صبع دم جس گھڑی پھول کی پنکھڑی
اوس کا آینہ جگمگانے لگا
ایک بھنورا وہیں، دیکھ کر ہر کہیں
شاخ کی اوٹ سےسر اٹھانے لگا
پھل، بھنورا تلاطم ہے، ٹہراؤ ہے
جو کچھ بھی ہے محبت کا پھیلاؤ ہے
خواب کیا کیا چنے، جال کیا کیا بنے
موج تھمتی نہیں، رنگ رکتے نہیں
وقت کے فرش پر، خاک کے رقص پر
نقش جمتے نہیں، ابر جھکتے نہیں
ہر مسافت کی دوریکا سمٹاؤ ہے
جو کچھ بھی ہے محبت کا پھیلاؤ ہے
Jo Kuch Bhi Hai Mohabbat Ka Phelao He
Teray Meray Abad Ka Kinara He Ye
Istaara He Ye
Roop Ka Daao He
Pyar Ka Ghao He
Jo Kuch Bhi He Mohabbat Ka Phelao He
Subha Dum Jis Ghari, Phool Ki Pankhari
Aos Ka Aaina Jagmaganay Laga
Aik Bhanwara Wahee, Dekh Ker Her Kahee
Shaakh Ki Aut Se Sir Uthanay Laga
Phool, Bhanwara, Talatum Hai, Thehrao Hai
Jo Kuch Bhi He Mohabbat Ka Phelao He
Khuwab Kia Kia Chunay, Jaal Kia Kia Bunay
Mauj Thamti Nahi, Rang Rukte Nahi
Waqt Ke Farsh Per, Khaak Ke Raqs Per
Naqsh Jamtay Nahi, Abar Jhuktay Nahi
Her Musafat Ki Doori Ka Simtao Hai
Jo Kuch Bhi Hai Mohabbat Ka Phelao He

اپنا تبصرہ بھیجیں