Yeh Barson Ka Taluq Torr Dena Chahte Hain Hum

غزل
یہ برسوں کا تعلق توڑ دینا چاہتے ہیں ہم
اب اپنے آپ کو بھی چھوڑ دینا چاہتے ہیں ہم
 
کسی دہلیز پر آنکھوں کے یہ روشن دیئے رکھ کر
ضمیر صبح کو جھنجھوڑ دینا چاہتے ہیں ہم
 
جدھر ہم جا رہے ہیں اس طرف ٹوٹا ہوا پل ہے
یہ باگیں اس سے پہلے موڑ دینا چاہتے ہیں ہم
 
یہ نوبت کل جو آنی ہے تو شرمندہ نہیں ہوں گے
مراسم احتیاطا توڑ دینا چاہتے ہیں ہم
 
عجب دیوانگی ہے جس کے ہم سائے میں بیٹھے ہیں
اسی دیوار سے سر پھوڑ دینا چاہتے ہیں ہم
 
تعلق کرچیوں کی شکل میں بکھرا تو ہے پھر بھی
شکستہ آئینوں کو جوڑ دینا چاہتے ہیں ہم
Ghazal
Yeh Barson Ka Taluq Torr Dena Chahte Hain Hum
Ab apne aap ko bhi chorr dena chahte hain hum
 
Kisi dehleez pr ankhon ke yeh roshan diye rakh kar
Zameeer-e-subh ko jhinjhorr dena chahte hain hum
 
Jidhar hum ja rahe hain us taraf toot‘ta hua pull hai
Yeh baaagen is se pehle morr dena chahte hain hum
 
Yeh naubat kal jo aani hai to sharminda nahin hon ge
Maraasim ehtiyatan torr dena chahte hain hum
 
Ajab deewangi hai jis ke hum saaye main bethe hain
Usi deewar se sar phorr dena chahte hain hum,
 
Taluq kirchiyon ki shakal main bikhraa to hai phir bhi
Shikasta aayinon ko jorr dena chahte hain hum

اپنا تبصرہ بھیجیں