Zara Sa Mukhtalif Kya Sochte Thay

Zara Sa Mukhtalif Kya Sochte Thay

Zara Sa Mukhtalif Kya Sochte Thay
Sab hi tanqeed karne lag gaye thay

Tumhara shukriya aa doobti nao
Keh hum bhi terna bhole hoye thay

Mohabbat jaan le leti hamari
Hum hi ne hath upper kar liye thay

Agar tou aaj bhi wapas nah aata
Yeh sab tera janaza parh chuke thay

Tere iss gaon mein aane se pehle
Hamre aastane chal rahe thay

Hadaf to aur hi tha mera
Parinde muft mein mare gaye thay

Koi kehta nahi tha lot aao
Keh hum paise hi itne bhejte thay

Zara sa mukhtalif kiya sochte thay
Sab hi tanqeed karne lag gaye thay
غزل
ذرا سا مختلف کیا سوچتے تھے
سب ہی تنقید کرنے لگ گئے تھے

تمہارا شکریہ اے ڈبتی ناؤ
کہ ہم بھی تیرنا بھولے ہوئے تھے

محبت جان لے لیتی ہماری
ہم ہی نے ہاتھ اوپر کر لئے تھے

اگر تو آج بھی واپس نہ آتا
یہ سب تیرا جنازہ پڑھ چکے تھے

تیرے اس گاؤں میں آنے سے پہلے
ہمارے آستانے چل رہے تھے

ہدف تو اور ہی تھا میرا
پرندے مفت میں مارے گئے تھے

کوئی کہتا نہیں تھا لوٹ آؤ
کہ ہم پیسے ہی اتنے بھیجتے تھے

ذرا سا محتلف کیا سوچتے تھے
سب ہی تنقید کرنے لگ گئے تھے

اپنا تبصرہ بھیجیں