Agar Fiza Hai Mukhalif, Nah Ab Uraan Bharen

Agar Fiza Hai Mukhalif, Nah Ab Uraan Bharen

Agar Fiza Hai Mukhalif, Nah Ab Uraan Bharen
To phir parinday naye kaisay, kab uraan bharen

Yeh jaal mal ke uratay hain, gar nahi katta
Bas aik shart yahi hai keh sab uraan bharen

Udhar bakheray gaye danay, zair karnay ko
Idhar mein kehti rahi zair-e-lab, uraan bharen

Hamein nah rok darakhta safar naseeb-e-hai par
Dua zaroor hamein dena jab uraan bharen

Zameen peh rukhtay tu dam ghut ke mar gaye hotay
Howa yeh faisla phir aik shab uraan bharen

Hamein sikhaya shikari ne waar kartay hoye
Sakat paron mein bohat ho tu tab uraan bharen

Agar fiza hai mukhalif, nah ab uraan bharen
To phir parinday naye kaisay, kab uraan bharen
غزل
اگر فضا ہے مخالف، نہ اب اُڑان بھریں
تو پھر پرندے نئے کیسے ، کب اُڑان بھریں

یہ جال مل کے اُڑاتے ہیں، گر نہیں کٹتا
بس ایک شرط یہی ہے کہ سب اُڑان بھریں

اُدھر بکھیرے گئے دانے، زیر کرنے کو
اِدھر میں کہتی رہی زیرِ لب، اُڑان بھریں

ہمیں نہ روک درختا ! سفر نصیب ہے، پر
دعا ضرور ہمیں دینا جب اُڑان بھریں

زمیں پہ رکتے تو دم گھٹ کے مر گئے ہوتے
ہوا یہ فیصلہ پھر ایک شب، اُڑان بھریں

ہمیں سکھایا شکاری نے وار کرتے ہوئے
سکت پروں میں بہت ہو تو تب اُڑان بھریں

اگر فضا ہے مخالف، نہ اب اُڑان بھریں
تو پھر پرندے نئے کیسے ، کب اُڑان بھریں
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں