Wohi Log Hain Aur Wohi Shaam Hai

Ghazal :
Wohi Log Hain Aur Wohi Shaam Hai
Sakhi es kahani main ilzam hai
 
Sakhi tu meray bister ka nahi
Sakhi to meray dil ka aram hai
 
Sakhi kyun karo kaam kay naam per
Sakhi kia muhabbat koi kaam hai
 
Sakhi teri chadar salamt rahay
Sakhi tera majzoob badnaam hai
 
Sakhi main nahi main nahi hun kahin
Sakhi ishq hai ishq inam hai
 
Sakhi tujhko achai lagi yeh zameen
Sakhi yeh saiyaara tere naam hai
غزل
وہی لوگ ہیں اور وہی شام ہے
سخی اس کہانی میں الزام ہے
 
سخی تو میرے بسترے کا نہیں
سخی تو میرے دل کا آرام ہے
 
سخی کیوں کرو کام کے نام پر
سخی کیا محبت کوئی کام ہے
 
سخی تیری چادر سلامت رہے
سخی تیرا مجزوب بد نام ہے
 
سخی میں نہیں میں نہیں ہوں کہیں
سخی عشق ہے عشق انعام ہے
 
سخی تجھکو اچھی لگی یہ زمیں
سخی یہ سیارہ تیرے نام ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں